منگل‬‮   28   مئی‬‮   2024
 
 

سلامتی کونسل میں پاکستانی وزیر خارجہ کاکشمیر پر بیان بے نظیر، دونوں ملکوں میں شدید تنائو، ہندوستان ٹائمز

       
مناظر: 709 | 17 Dec 2022  

اسلام آباد(پیارا کشمیر نیوز ڈیسک ) ہندوستان کے معروف انگریزی روزنامہ اخبار ” ہندوستان ٹائمز” نے اپنے ادارئیے میں کہا ہے کہ اقوام متحدہ کی سلامتی کونسل کے اجلاس میں ہندوستان کے وزیر خارجہ ایس جے شنکر اور ان کے پاکستانی ہم منصب بلاول بھٹو زرداری کے درمیان تصادم کے ساتھ ہندوستان اور پاکستان کے درمیان شدید تنائو پھوٹ پڑا ہے اورپاکستانی وزیر خارجہ کے سلامتی کونسل میں ہندوستان کے خلاف کشمیر کے معاملے میں مثال نہیں ملتی اور اس سے ہندوستان اور پاکستان کے درمیان تعلقات مزید پریشانی کا اشارہ دیتے ہیں۔” ہندوستان ٹائمز” نے16دسمبر کو اپنے ادارئیے میں مزید لکھا کہ وزیر خارجہ جے شنکر نے پاکستان سے متعلق دہشت گردی کے حوالے سے بات تو کی ہے لیکن پاکستانی وزیر خارجہ نے نے جس طرح اہم عالمی ادارے میں کشمیر کے مسئلے کا سرگرم بیان کیا ہے ،ایسا پہلے دیکھنے میں نہیں آیا اور اس صورتحال میں پاکستان اور ہندوستان کے درمیان تعلقات مزید خراب ہو نے کی نشاندہی ہوتی ہے۔
ہندوستان کے اس اہم انگریزی روزنامہ کے اس ادرئیے سے واضح ہوتا ہے کہ اقوام متحدہ کی سلامتی کونسل میں وزیر خارجہ بلاول بھٹو زرداری کی طرف سے کشمیر کے مسئلے پر مضبوط وکالت اور کشمیر سے متعلق سلامتی کونسل کے موثر کردار کے مطالبے سے ہندوستان سفارتی سطح پہ پریشانی اور دبائو کا شکار نظر آتا ہے۔
واضح رہے کہ پاکستان کے وزیر خارجہ بلاول بھٹو زرداری نے اقوام متحدہ کی سلامتی کونسل کے ”بین الاقوامی امن اور سلامتی، اصلاحات” کے موضوع کے حوالے سے14دسمبر کو اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے مطالبہ کیا کہ سلامتی کونسل مسئلہ کشمیر پر اپنی قراردادوں پر عمل درآمد کرے اور خطے میں امن کے لیے اپنے عزم کو پورا کرے اور یہ ثابت کرے کہ کثیرالجہتی کامیاب ہو سکتی ہے۔ وزیر خارجہ نے 15 رکنی کونسل کو ایک ایجنڈا آئٹم کی یاد دلائی جس پر کوئی توجہ نہیں دی گئی تھی ، یعنی جموں و کشمیر کا مسئلہ۔ انہوں نے کہا کہ ہم اسے ایک کثیر القومی ایجنڈا، اس UNSC کا ایک ایجنڈا مانتے ہیں اور اگر آپ کثیر جہتی ادارے یا کثیر جہتی کی کامیابی اور اسی کونسل کی کامیابی دیکھنا چاہتے ہیں، تو یقینا آپ اس عمل میں مدد کر سکتے ہیں، اقوام متحدہ کی سلامتی کونسل کی قراردادوں پر عملدرآمد کی اجازت دیں، جب کشمیر کا سوال ہو تو ثابت کریں کہ کثیرالجہتی کامیاب ہو سکتی ہے، ثابت کریں کہ سلامتی کونسل کامیاب ہو سکتی ہے اور خطے میں امن قائم کر سکتی ہے۔انہوں نے کہا کہ پاکستان سمجھتا ہے کہ اقوام متحدہ، سلامتی کونسل اور جنرل اسمبلی کو مزید جمہوری بنانے سے اس ادارے کو بااختیار بنایا جائے گا اور اسے کام کرنے کا اخلاقی اختیار ملے گا۔ انہوں نے کہا کہ یہ ادارے کو مزید جمہوری بنانے اور سب کی خود مختاری کی برابری کی اجازت دے گا نہ کہ کچھ کی برتری برقرار رکھنے کے لئے۔
وزیر خارجہ بلاول نے کہا کہ “یہ اقوام متحدہ کے مقاصد کو پورا نہیں کرتا کہ وہ اپنے ایلیٹسٹ کلب میں مزید ممبران شامل کرے اور ویٹو کی ظالمانہ طاقت کو بڑھائے۔” سلامتی کونسل کو “عصری عالمی حقائق” کی عکاسی کرنی چاہیے۔ بین الاقوامی امن و سلامتی کو برقرار رکھنے کی بنیادی ذمہ داری سلامتی کونسل کی ہے۔ .اقوام متحدہ سلامتی کونسل کے زیر اہتمام امن کو فروغ دینے اور تنازعات کے حل کے لیے کثیرالجہتی حل سب سے موثر طریقہ پیش کرتے ہیں۔ سلامتی کے بڑے مسائل بشمول ہمارے خطے کے مسائل کو سلامتی کونسل اور سیکرٹری جنرل کی فعال شمولیت کے ذریعے موثر اور پرامن طریقے سے حل کیا جا سکتا ہے۔
وزیر خارجہ نے اس بات پر زور دیا کہ “کثیرالطرفہ” کی بنیاد اقوام متحدہ کے چارٹر کے بنیادی اصولوں کی ہمہ گیر اور مستقل پاسداری پر ہونی چاہیے، “چارٹر کے اصولوں پر سختی سے عمل کرنا زیادہ ضروری ہو گیا ہے۔وزیر خارجہ نے اقوام متحدہ کی سلامتی کونسل پر زور دیا کہ وہ محض ‘انتظام’ کے بجائے تنازعات اور تنازعات کو حل کرنے کی کوشش کرے،سلامتی کونسل کو تنازعات کی بنیادی وجوہات، جیسے غیر ملکی قبضے اور عوام کے تسلیم شدہ حق خودارادیت کو دبانے پر توجہ دینی چاہیے، اور، چارٹر کے آرٹیکل 25 کے تحت اپنی ذمہ داری کے مطابق، رکن ممالک کو کونسل کے فیصلوں پر عمل درآمد کرنا چاہیے۔ سلامتی کونسل کو تنازعات کے پیدا ہونے سے پہلے ہی روکنے کے لیے اور تنازعہ کے پھوٹ پڑنے کے بعد بلکہ پیشگی اقدام کرنا چاہیے۔
وزیر خارجہ بلاول نے کہا کہ اقوام متحدہ کے 193 ارکان میں سے زیادہ تر چھوٹے اور درمیانے درجے کی ریاستیں ہیں انہیں سلامتی کونسل کی توسیع کے ذریعے مساوی طور پر کام کرنے کی ضرورت ہے۔ نئے “مستقل ممبران” کو شامل کرنے سے اقوام متحدہ کے رکن ممالک کی اکثریت کے لیے سلامتی کونسل میں نمائندگی کے مواقع عددی طور پر کم ہو جائیں گے۔ہمیں سب کی خود مختاری برابری کے اصول پر کاربند رہنا چاہیے نہ کہ برتری کا۔ نئے مستقل اراکین کو شامل کرنے سے “سلامتی کونسل میں فالج” کے امکانات بڑھ جائیں گے جیسا کہ ماضی میں دیکھا گیا تھا جب فورم اپنے مستقل اراکین کے درمیان اختلافات کی وجہ سے کام کرنے سے قاصر رہا تھا۔اس سے مسئلہ حل نہیں ہو سکتا۔وہ ریاستیں جن کے پاس سلامتی کونسل کی قراردادوں پر عمل درآمد نہ کرنے کا ریکارڈ موجود ہے انہیں کونسل کی رکنیت کے کسی بھی قسم کے لیے قابل غور نہیں سمجھا جا سکتا۔
انہوں نے کہا کہ اقوام متحدہ کے تمام اہم اداروں، جنرل اسمبلی، سلامتی کونسل، اقتصادی اور سماجی کونسل، انسانی حقوق کونسل، بین الاقوامی عدالت انصاف، سیکرٹری جنرل اور سیکرٹریٹ ، کو بااختیار بنانا اور مثر طریقے سے استعمال کرنا ضروری ہے۔ عالمی مالیاتی اور اقتصادی حکمرانی کے ڈھانچے میں مساوات اور جمہوریت کو بھی شامل کرنا چاہیے۔تنگ نظری کے عوام پرستی، آمریت کے بڑھتے ہوئے رجحان کے لیے ہمیں نفرت انگیز نظریات، زینو فوبیا، پاپولسٹ انتہا پسندی اور نسلی اور مذہبی عدم برداشت کا مقابلہ کرنا چاہیے، جس میں اسلامو فوبیا بھی شامل ہے، جو امتیازی سلوک اور تشدد، اور یہاں تک کہ نسل کشی کے خطرات کو مسلط کرتا ہے۔

مقبوضہ کشمیر میں بھارت کی انسانیت دشمنی کی تفصیل
From Jan 1989 till 29 Feb 2024
Total Killings 96,290
Custodial killings 7,327
Civilian arrested 169,429
Structures Arsoned/Destroyed 110,510
Women Widowed 22,973
Children Orphaned 1,07,955
Women gang-raped / Molested 11,263

Feb 2024
Total Killings 0
Custodial killings 0
Civilian arrested 317
Structures Arsoned/Destroyed 0
Women Widowed 0
Children Orphaned 0
Women gang-raped / Molested 0